موبی لنک کی جانب سے صدر پاکستان کی ذات پر حملہ : اشتہار میں فحش زبان کا استعمال

صدر پاکستان جناب آصف علی زرداری صاحب کو یہ جان کر ہرگز خوشی نہ ہوگی کہ اب سیاسی مخالفین اور ٹی وی چینلز کے بعد ٹیلی کام کمپنیاں بھی اپنے اشتہارات میں انکی ذات پر حملے کرنے لگی ہیں۔

mobilink-zardari

اس حوالے سے پہل پاکستان کی سب سے بڑی موبائل کمپنی موبی لنک نے کی اور تمام حدیں ہی پار کردیں۔ چند روز قبل کمپنی کی جانب سے موبائل بینکنگ سروس MobiCash کی ایک تشہیری ویڈیو تیار کی گئی جس میں سروس ایکٹیویٹ کرنے کا طریقہ کار بیان کیا گیا ہے۔ ویڈیو ایک سادہ سی اینی میشن ہے تاہم اصل چیز اس میں دکھایا جانے والا پاکستانی کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ ہے۔ یہ کارڈ اس ویڈیو میں دو بار دکھایا گیا ہے۔ کارڈ پر موجود تفصیلات کافی دھندلی ہیں لیکن اگر غور کیا جائے تو اس میں بہت سی دلچسپ باتیں لکھی ہیں۔ ویڈیو کی ایک سکرین شاٹ ملاحظہ کیجئے:

mobilink
اگر آپ کو کارڈ کے کوائف پڑھنے میں کچھ دشواری ہے تو لیجئے ہم پڑھنے میں آپکی مدد کرتے ہیں۔ ہم اس تحقیق پر PakZindabad کی ٹیم کے شکر گذار ہیں جنہوں نے انتہائی باریک بینی سے اس شعبدہ بازی کا جائزہ لیا۔

نام: زرداری کمینا
جنس: خواجہ سرا
والد / شوہر کا نام : ابھی تک معلوم نہیں ہوسکا
شناختی علامت: کتے جیسا منہ

ہم اپنے بلاگ پر صدر صاحب کے بارے میں ایسی موبی لنک کی جانب سے استعمال کی گئی ایسی لغو زبان لکھنا نہیں چاہتے مگرحقائق کو سامنے لانا بھی ضروری ہے اور پکچرتو ابھی باقی ہے میرے دوست، حامل کارڈ کے دستخط کی جگہ ’خاندانی کنجر‘ اور رجسٹرار کے دستخط کی جگہ ’باراک اوبامہ‘ درج ہے۔

آپ جانتے ہیں کہ آج کل مختلف ٹی وی پروگرامز اور مزاحیہ ڈراموں میں اکثر اوقات ایکٹرز سیاست دانوں کی نقل اتارتے ہیں اور مزاحیہ جملے ادا کرتے نظر آتے ہیں۔ لیکن ایک ملٹی نیشنل کمپنی کی جانب سے صدر پاکستان کی ذات پر حملہ ایک غیر مہذب اور اخلاق گری ہوئی حرکت ہے۔  اس کام میں کون کون لوگ ملوث ہیں اور درپردہ اس شعبدی بازی کا مقصد کیا ہے؟ یہ تو بعد میں معلوم ہوگا تاہم موبی لنک اور اورسکام کے اعلی حکام کا فرض ہے کہ فوری طور پر اسکی تحقیقات کروائیں۔

موبی لنک کی جانب سے فیس بک پیج پر یہ ویڈیو فوری طور پر تو نہ ہٹائی گئی مگر PakOrbit پر یہ نیوز بریک کرنے کے بعد البتہ فیس بک پیج سے مجھے بین ضرور کر دیا گیا۔ اس کے علاوہ ہماری ہوسٹنگ کمپنی کے نمائیندہ کے مطابق رات گئے ویب سائیٹ پر ہیکرز کی جانب سے پاسورڈ چوری کرنے کے لیے بھی حملے کیے جاتے رہے تاہم سرور کی اچھی سیکیورٹی کے باعث انہیں کامیابی نہ مل سکی۔

اب موبی لنک نے MobiCash کے پیج سے یہ ویڈیو تو ہٹا دی ہے مگر آپ دوستوں کی تفریح کے لیے ہم نے اسے مفت ہوسٹنگ پر پہلے ہی اپلوڈ کر دیا تھا۔ خود بھی دیکھیے اور دوستوں کو بھی اسکے بارے میں بتائیں۔

  • صدر ملک کا آئیکون ہوتا ہے ۔ آپ صدر کے خلاف آپس میں کچھ بھی کہہ لیں لیکن ٹی وی چینلز اور ریڈیو پر ایسے اشتہارات دکھانا یا ایسے پروگرام دکھانا جس میں فحش زبان سے صدر کے خلاف بولا گیا ہو ۔ ایسے ادارہ کو سزا دینی چاہیئے ۔ یہاں پر آپ صدر زرادری کو داد دیں کہ وہ برداشت کیئے جارہے ہیں ۔

    • بلال بھائی !
      آخر اس اشتہار میں ایسا غلط کیا ہے۔ ٹھیک ہی تو لکھا ہے۔ آپ خواہ مخواہ خفا ہوگئے۔۔۔۔

    • Muhammad Ashfaq Sulehri

      Very good work done by Mobilink. It show there is atleast any group who can show the real face of Ruling class

    • Muhammad Ashfaq Sulehri

      bohat اعلی کام ہوا ہے

  • غلام مصطفی لدھانہ (لیہ)

    یہ ایک انتہائی گھٹیا حرکت ہے .کچھ بہی ہو زرداری صدر پاکستان ہیں….پی ٹی اے کو اس کے خلاف ایکشن لینا چاہیئے مگر پی ٹی اے کو صارفین کی جاسوسی اور ویب سائٹس بلاک کرنے سے فرصت ملے تو……..

  • کسی بھی مہذب معاشرے میں اس طرح کی حرکت کرنے والے کی درگت بن سکتی ہے. اگر موبی لنک کی خلاف مقدمہ کیا گیا، اور ہتک عزت کا دعوی کیا گیا تو ان کو لینے کے دینے پڑ جائینگے. آج انہوں نے صدر زرداری کا مذاق اڑایا ہے، کل یہ آرمی چیف اور چیف جسٹس کو بھی نہیں بخشیں گے. ذرائع ابلاغ پر ہوںے والی ہلکی پھلکی تنقید اپنی جگہ درست ہے، لیکن اسطرح کی اشتہار بازی کا مقصد یقینا خطرناک ہے. موبی لنک کا لائیسنس تین مہینے کے لییے معطل کر دو، ان کے ہوش ٹھکانے آجاینگے.

  • سازشی تھیوری
    یہ پی پی پی کی اپنی حرکت ہو سکتی ہے تاکہ ہمدردیاں سمیٹی جائیں۔

  • ironman

    waisa kam buhat acha hova ha aisa hona chiyah

  • ہوا بہت غلط ہے ۔ البتہ موبی لنک نے اربوں روپیہ ٹیکس کا ناجائز طریقے سے بچایا ۔ پی ٹی اے اس کے خلاف کاروائی کرنے لگا تو اس وقت کے وزیر اعظم شوکت عزیز نے پی ٹی اے کے چیئرمین کو ٹیلیفون کر کے منع کر دیا ۔ زرادری صاحب بادشاہ بنے تو چیرمین پی ٹی اے کو ہٹا دیا اور اس کے بعد اپنا آدمی وہا لگا دیا جس نے آج تک کوئی کاروائی نہیں کی

  • Basit Noor

    صدرپاکستان کی تو کوئی عزت ہی نہیں ہے۔ بے عزتی کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

  • Javaid Sarwar

    Greetings, someone wrote that it is possible that PPP has done it themselves to get the sympathies of people, this is very true, they go to any extend, for politics they can change the name of Bilawal ((is liking changing someone’s father)

  • حفیظ غریب

    جو هوا اچها هوا